غریب جوان بیٹی کی شادی اور جہیز

Posted on: March 12, 2018 at 2:21 am
Views: 269

غریب جوان بیٹی کی شادی اور جہیز

وہ ساتھ والے کمرے میں دیوار سے کان لگائے لرزتے ہوئے سن رہی تھی۔۔۔ اس کے بھائی جو اپنے ایک دوست کے ساتھ ابھی ابھی گھر آئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔یہ انہی کی آواز تھی۔۔۔

”بابا ۔۔ ہم زیادہ سامان نہیں دے سکیں گے۔۔۔ورنہ عمر بھر قرض اتارتے رہیں گے۔۔۔“

آواز میں پریشانی اور الجھن کے ساتھ ساتھ اکتاہٹ بھی تھی۔۔۔
بابا کی بھرائی ہوئی آواز سنائی دی۔۔۔ ” کاش پیسہ ہوتا ہم اپنی بیٹی کو سب کچھ دے کے رخصت کرتے۔۔۔ “

اس نے تصور میں دیکھا ۔۔ ماں بیچاری تو سب سن کر بس رو رہی ہو گی۔۔۔۔۔رو رو کر بیچاری کے آنسو بھی خشک ہوچکے تھے

اسے خود پر بہت غصہ آ رہا تھا۔۔۔ جی چاہ رہا تھا۔۔ جا کے زور زور سے کہہ دے۔۔۔۔ مجھے کچھ نہیں لینا۔۔۔ بس آپ لوگوں کی خوشی اور سکون ہی میرے لیے سب سے بڑا جہیز ہے۔۔۔۔

مم مگر۔۔۔۔ اسے خیال آیا۔۔۔۔ میں مجبور ہوں۔۔۔ ظالم سماج نے بڑا بھاری بھرکم جہیز لازمی بنا رکھا ہے۔۔۔کائنات کی حقیقی شہزادی سیدہ فاطمہ رضی اللہ تعالی عنہا کا جہیزبھی تو تھا۔۔۔۔۔لیکن ۔۔۔۔۔

ضرورت مجھے نہیں۔۔۔ میرے سسرال کو ہے۔۔۔۔۔ اگربات میری ہوتی۔۔۔۔ بات بیٹی کی ہوتی۔۔۔۔ تو ہر بیٹی جہیز۔۔۔ میں باپ کا کِھلا چہرہ۔۔۔ ماں کے محبت بھرے بوسے۔۔۔اور بھائی کے پیار کی طلب کرتی۔۔۔۔

اس کی آنکھوں سے آنسو جاری تھے۔۔۔۔ قرض مانگنے کی تیاریاں ہو رہی تھیں۔۔۔

وہ دھڑام سے چارپائی پر جا گِری۔۔۔۔۔ یا اللہ ۔۔۔۔ میں کہاں جاؤں۔۔۔
کاش امیر لوگ۔۔۔یہ رسم کو نہ بڑھاتے۔۔۔ میں کتنی مجبور ہوں۔۔ کاش۔۔۔۔سسرال سے پیغام آجائے۔۔

ہمیں بس بیٹی سے مطلب ہے۔۔۔ سامان تو ہمارے پاس سب ہے۔۔۔ ایک بیٹی کی کمی ہے۔۔۔۔۔؟؟؟؟

ہاں آواز تو آئی تھی ۔۔۔۔۔۔لیکن کیا وہ سچی تھی

اب بھی آواز آ رہی تھی۔۔۔۔ شادی پر غم کی آواز۔۔۔۔ ’’جا بیٹا۔۔۔۔۔ قرض لے کے آ۔۔۔۔۔ بیٹی کو تو گھر سے اٹھانا ہے۔۔۔‘‘ بابا کی بڑھاپے سے کپکپاتی آواز تھی۔۔۔۔

کک کیا۔۔۔۔ بیٹی کافی نہیں۔۔۔؟؟ جہیز کیوں۔۔۔۔؟؟کاش کوئی سنے۔۔۔ کوئی دیکھے۔۔۔۔ میرے ماں باپ کا حال۔۔۔۔ تو کبھی جہیز نہ لے۔۔۔ وہ زور زور سے رو رہی تھی۔۔۔۔۔

لاکھوں بیٹیاں۔۔۔ جہیز نہ ہونے کی وجہ سے بوڑھی ہو گئیں۔۔۔ لاکھوں۔۔ اپنے ماں باپ کو عمر بھر کے لیے مقروض کر کے اٹھیں۔۔۔۔کہاں گئے وہ ۔۔۔۔؟؟؟ جو کسی پر بوجھ نہیں بنتے تھے۔۔۔۔ ارے کوئی دیکھو۔۔۔ میرا گھر برباد ہو رہا۔۔۔ وہ چِلا رہی تھی۔۔۔ اور پھر وہ سب کچھ بھول بھال کر ۔۔۔۔۔۔اپنے پیارے اللہ عزوجل کی بارگاہ میں سجدہ ریز تھی ۔۔۔۔۔اور

میں سن رہا تھا۔۔۔۔۔دیکھ رہا تھا۔۔۔ ایک مہکتے ہوئے باغ کے مالی اپنے ہی ہاتھوں سے باغ میں خزاں لانے جا رہے تھے۔۔۔

ہنستے بستے گھر میں۔۔۔ اداسی اور ویرانی کی تدبیریں خود اہل خانہ کر رہے تھے۔۔۔ اپنی مسکراہٹوں اور سکون کو گھر سے خود نکالنے کی صلاح ہو رہی تھی۔۔۔۔۔۔بالآخر معاملے میری برداشت سے باہر ہوگیا۔۔۔۔۔اور ۔۔۔۔۔
میں فوراً لڑکے والوں کے گھر پہنچا۔۔۔۔۔ ان کے سامنے اجڑتے ہوئے گھر کا منظر پیش کیا۔۔۔لڑکے کا باپ میری بات سن کر ۔۔۔۔۔عجیب سے انداز میں اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔۔۔۔جیسے ماضی میں ایسا ہی کوئی دلخراش واقعہ اس کے ساتھ پیش آچکا ہواور بولا۔۔۔۔

آؤ میرے ساتھ ۔۔۔ مجھے ساتھ لے کر۔۔۔۔ وہ لڑکی والوں کے گھر کی جانب چل پڑا۔۔۔۔۔۔لڑکی گھر والے اس اچانک آمد پر حیران و پریشان ہوگئے۔۔۔۔۔یااللہ خیر ۔۔۔۔

اور پھر ایک آواز گونجی ۔۔۔بھائی صاحب۔۔۔۔ ایک بات کا خیال رکھنا۔۔۔ ہمیں بیٹی دے رہے ہو۔۔۔۔ اس سے آگے کچھ نہیں بچتا۔۔۔۔
سجدے کی حالت میں اس کے کان میں بھی یہ آوازآئے ۔۔۔۔۔ سکتا طاری تھا۔۔۔۔ کرم فرمانے والے رب کریم ۔۔۔۔۔۔تو کتنا کریم ہے ۔۔۔۔۔۔۔اور یہ سجدہ کتنا طویل تھا ؟کوئی نہیں جانتا

اس کا باپ بولا۔۔۔نہیں بھائی صاحب ہم نے اپنی بیٹی کو کچھ نہ کچھ دینا ہے۔
نہیں بالکل نہیں ، جو بھی ضرورت ہو ہماری بیٹی ہمارے گھر آکے خود بنا لے گی ،ہمیں یہ رسم ختم کر کے بیٹی کو اہمیت دینی چاہیے۔۔۔

وہ سر اٹھاکر دوبارہ سجدے میں گر چکی تھی ۔۔۔ ’’ یا اللہ بے بیشک تو ہی بگڑی سنوارنے والا ہے ‘‘

لڑکے کا باپ جاچکا تھا۔۔۔۔۔یقیناً جو سکون آج اسے ملا تھا بنگلہ کوٹھی ،آفس ،بڑی کار نے یہ سکون نہیں دیا

ماں اب بھی رورہی تھی ۔۔۔۔۔۔آنسو اب بھی اس کے رخساروں پر بہہ رہے تھے۔۔۔۔۔خوشی کے آنسو

سب گھر والے اس حیران کن معاملے پرخوشگوار حیرت میں مبتلا تھے۔

اے لڑکے والو۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا آپ بھی۔۔۔۔۔بیٹیوں ۔۔۔۔ان کے بھائیوں۔۔۔۔ان کے والدین کے سکون کے لئے۔۔۔۔۔۔زبان سے نہیں ۔۔۔۔بلکہ زبان و دل دونوں سے ان کو یہ نہیں کہہ سکتے۔۔۔۔۔۔۔۔’’بھائی صاحب ہمیں بیٹی چاہیے۔۔۔ جہیز نہیں ۔۔۔ بیٹی سے آگے کچھ نہیں بچتا ۔۔۔ ‘‘

آپ مانیں یا نہ مانیں ۔۔۔۔لیکن یہ سچ ہے کہ بہت سی بیٹیاں یا تو بیاہی نہیں جاتیں۔۔۔ یا ماں باپ کی خوشیاں چھین کر بیاہی جاتی ہیں۔ آپ بھی اس کا حصہ بنیں گے۔۔۔۔۔؟؟

( منجانب : سوشل میڈیا ، دعوت ِ اسلامی)