جب اژدھا انسان کو نگل گیا

Categories: Other
Tags:
Posted on: February 13, 2018 at 3:42 pm
Views: 83

جب اژدھا انسان کو نگل گیا

ایک سپیرا دن رات نت نئے اور زہریلے سانپوں کی تلاش میں جنگل, بیابان, کوہ و صحرا میں مارا مارا پھرتا رہتا تھا۔ ایک دفعہ سخت سردی کے موسم میں پہاڑوں میں سانپ تلاش کر رہا تھا کہ اس نے ایک مردہ اژدھا دیکھا, جو بھاری بھر کم اور قوی الجثہ تھا ، اژدھا کیا تھا ستون کا ستون تھا ۔

اسے خیال آیا اگر اس مردہ اژدھے کو کسی طریقے سے شہر لے جاؤں تو دیکھنے
والوں کا ہجوم اکٹھا ہو جائے گا ، لوگوں کے جمع ہو جانے سے میں خوب مال کماؤں گا ۔

سپیرا اسے بڑی مشکل سے گھسیٹ کر شہر لے آیا۔ سپیرے کے اس کارنامے سے شہر میں اودھم مچ گیا ۔۔۔ “تُو چل میں چل” جس کے کانوں میں یہ خبر پہنچی کہ سپیرا ایک نادر قسم کا اژدھا پکڑ کر لایا ہے وہی سب کام چھوڑ کر اسے دیکھنے چل پڑا ۔۔۔ سینکڑوں ہزاروں لوگ جمع ہو گئے ۔۔۔

بے پناہ سردی اور برف باری کی وجہ سے اژدھے کا جسم سُن ہو چکا تھا جس کے باعث وہ مردہ دکھائی دے رہا تھا۔ سپیرے کے گھسیٹ کر لانے’ ہجوم کی گرمی اور سورج کی روشنی سے اچانک اژدھے کے جسم میں تھرتھری پیدا ہوئی اور اس نے اپنا منہ کھول دیا ۔

اژدھے کا منہ کھولنا تھا کہ قیامت برپا ہو گئی ۔۔۔ بد حواسی اور خوف سے جس کا جدھر منہ اٹھا اسی طرف کو بھاگا ۔۔۔ جوں جوں آفتاب کی گرم دھوپ اژدھے پر پڑرہی تھی توں توں اس کی رگ رگ میں زندگی نمودار ہونے لگی تھی ۔۔۔

مارے دہشت کے سپیرے کے ہاتھ پاؤں پُھول گئے کہ کس آفت کو اٹھا لایا ، اپنے ہاتھوں اپنی موت بلا لی ، ابھی وہ بھاگنے بھی نہ پایا تھا کہ اژدھے نے اپنا غار سا منہ کھول کر اس کو نگل لیا ، پھر وہ رینگتا ہوا آگے بڑھا اور ایک بلند عمارت کے ستون سے اپنے آپ کو لپیٹ کر ایسا بل کھایا کہ اس سپیرے کی ہڈیاں بھی سرمہ ہو گئیں ۔

ہمارا نفس بھی اژدھے کی مانند ہے، اسے مردہ مت سمجھو، ذرائع اور وسائل نہ ہونے کے باعث سُن نظر آتا ہے ، اللہ تعالٰی کی عبادت سے غفلت اور دنیا داری کی حرارت سے وہ حرکت میں آجاتا ہے۔ لہذا ہمیں چاہیے کہ اپنا وقت عبادتِ الٰہی میں گزاریں تاکہ ہمارے نفس کو حرکت میں آنے کی ہمت نہ ہو اور یہ ہم پرحاوی نہ ہو سکے ۔۔۔

( منجانب : سوشل میڈیا ، دعوت ِ اسلامی)